ایشیاء میں انٹرنیٹ کے استعمال میں پاکستان نے چھٹی پوزیشن حاصل کی ہے۔

سب کچھ ڈیجیٹلائز ہو رہا ہے، پاکستان میں بیشتر تنظیموں نے ڈیجیٹل ٹیکنالوجی کو اپنانا شروع کردیا ہے۔ 2020 میں، کوویڈ-19 ایک بہت بڑی ڈیجیٹل تبدیلی لایا ہے۔ اسٹیٹسٹا کے ذریعہ شائع ہونے والی ایک رپورٹ کے مطابق پاکستان 2020 میں ایشین انٹرنیٹ صارفین کی سب سے بڑی شراکت والے دس ممالک میں شامل ہے۔

اسٹیٹسٹا کے ذریعہ کئے گئے سروے میں، چین میں انٹرنیٹ استعمال کرنے والوں کا تناسب مئی 2020 تک ایشیاء میں 37.1 فیصد رہا، اس کے بعد ہندوستان 24.3 فیصد رہا۔ جبکہ پاکستان نے چارٹ میں 1.1 فیصد انٹرنیٹ صارفین کے ساتھ چھٹی پوزیشن حاصل کی ہے۔

جنوری 2020 میں، پاکستان میں انٹرنیٹ صارفین کی تعداد 76.38 ملین تھی۔ پاکستان میں انٹرنیٹ استعمال کرنے والوں کی تعداد میں 2019 سے 2020 کے درمیان 11 ملین (17 فیصد سے زیادہ) اضافہ ہوا ہے۔ جبکہ جنوری 2020 میں، پاکستان میں انٹرنیٹ کی نشونما 35 فیصد رہی۔

پاکستان نے جدید ترین 5 جی انٹرنیٹ کی طرف بھی اپنا سفر شروع کیا ہے اور 2022-23 میں اسے صارفین کو تجارتی طور پر دستیاب کرے گا۔ 5 جی انٹرنیٹ ڈاؤن لوڈ کی رفتار کو 10 گنا اضافہ کر کے ایک گیگا بٹ فی سیکنڈ (جی بی پی ایس) تک بڑھا دے گا اور اس سے یقینی طور پر پاکستان میں انٹرنیٹ صارفین کے تناسب میں کافی حد تک اضافہ ہوگا۔ اس کے نتیجے میں، ہم ملک میں نمایاں طور پر وسیع اقتصادی سرگرمیاں دیکھیں گے۔

یہ بات قابل تحسین ہے کہ پاکستان انٹرنیٹ کی تیز رفتاری پر کام کر رہا ہے اور انٹرنیٹ استعمال کرنے والوں کی بڑھتی ہوئی تعداد بھی ہمیں ایک مثبت تصویر پیش کررہی ہے کہ لوگوں کی سرگرمیاں ڈیجیٹلائز ہو رہی ہیں۔ لیکن پھر بھی پاکستان میں شہری اور دیہی علاقوں کے درمیان بہت بڑا فرق موجود ہے۔ پاکستان کے بیشتر علاقوں میں انٹرنیٹ تک رسائی بہت کم ہے اور اس کی وجہ سے، کام کرنے کے مواقع تک کم رسائ ہے۔ یہ علاقے عالمی سطح پر بہت دور ہیں جس کے نتیجے میں معاشرتی و معاشی ترقی سست ہوجاتی ہے۔

تبصرہ کریں

%d bloggers like this: