ٹرمپ انتظامیہ نے شیاؤمی کو بلیک لسٹ کردیا، امریکی سرمایہ کاروں کو سال کے آخر تک ہاتھ کھینچنے کو بول دیا گیا۔

ٹرمپ انتظامیہ نے شیاؤمی کو ایک "کمیونسٹ چینی فوجی کمپنی” کے طور پر نامزد کیا ہے جو اسے نومبر سے ٹرمپ انتظامیہ کے ایگزیکٹو آرڈر کے تحت بلیک لسٹ ہونے والی کمپنیوں میں شامل کرنے کے اہل بنائے گی جس کے تحت امریکی سیکیورٹیز اور سرمایہ کاری کمپنیوں کو "کمیونسٹ چینی فوجی کمپنیوں” میں سرمایہ کاری پر سرمایہ لگانے سے روکا جاتا ہے ۔

اس ایگزیکٹو آرڈر میں کہا گیا ہے کہ "چین امریکی سرمایہ کاروں کو اپنی فوج کی ترقی اور جدید کاری کے لئے مالی اعانت فراہم کرنے کے لئے استعمال کرتا ہے،” امریکی سرمایہ کاروں کو سیکیورٹیز فروخت کرکے جو امریکہ اور بیرون ملک دونوں ممالک میں پبلک اسٹاک ایکسچینج پر تجارت کرتے ہیں۔

شیاؤمی کو ان فوجی کمپنیوں میں سے ایک کے طور پر نامزد کرنے سے، جو کہ دنیا میں اسمارٹ فون بنانے والی تیسری بڑی کمپنی بھی ہے، انتظامیہ کو امید ہے کہ وہ نومبر 2021 تک امریکی کمپنیوں کو شیاؤمی میں سے اپنا سرمایہ واپس نکالنے پر مجبور کر دے گی۔ لگتا ہے کہ شیاؤمی کا اس فہرست میں دیگر صنعتی، ایرو اسپیس، اور کیمیائی، اور ٹیلی مواصلات کمپنیوں کے ساتھ کوئی تعلق نہیں ہے۔

ہواوے اس فہرست میں شامل ہے، لیکن شاید اس لئے کہ ہواوے بڑے پیمانے پر ٹیلی مواصلات کا بنیادی ڈھانچہ تعمیر کرتا ہے۔ بائیڈن انتظامیہ کے اقتدار سنبھالنے سے ایک ہفتہ سے بھی کم وقت باقی رہنے کے بعد، اس حکم کو کالعدم قرار دیئے جانے کا امکان ہے۔ اب دیکھتے ہیں کہ کیا نئی انتظامیہ کے ذریعہ امریکہ اور چین کے مابین کشیدگی کو دور کیا جاسکے گا اور کیا ہم کبھی چینی فون بنانے والی کمپنیوں کو سام سنگ اور ایپل کی تسخیر شدہ امریکی مارکیٹ میں اپنا مقام بناتے ہوئے دیکھ سکیں گے۔

دی ورج کے توسط سے

تبصرہ کریں

%d bloggers like this: