آئی ٹی ایکسپورٹ میں مالی سال 2021 کی پہلی سہ ماہی میں زبردست 40 فیصد اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔

مالی سال 2020-21 کی پہلی سہ ماہی میں پاکستان کے آئی ٹی سیکٹر نے مختلف ممالک کو اپنی خدمات کی برآمدات میں تیزی سے اضافہ کیا، جس سے ملک کے لئے نمایاں زرمبادلہ حاصل ہوا اور سال بہ سال 40 فیصد اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔

اسٹیٹ بینک آف پاکستان (ایس بی پی) کے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق، رواں سال جولائی سے ستمبر کے دوران آئی ٹی اور آئی ٹی کے ذریعے قابل خدمات کے تحت ترسیلات زر 444 ملین ڈالرز تک پہنچ گئیں جبکہ اس سے پچھلے سال کے اسی عرصے میں ریکارڈ 315 ملین ڈالرز ریکارڈ کیا گیا تھا۔

آئی ٹی سیکٹر کو کوویڈ-19 وبائی بیماری کی موجودہ صورتحال نے مزید بڑھاوا دیا۔ پاکستان کی آئی ٹی انڈسٹری اپنی دستیاب صلاحیتوں اور وسائل سے ملک کے لئے صحت مند زرمبادلہ پیدا کرنے کے مواقع کو استعمال کررہی ہے۔

آئی ٹی سروسز ایکسپورٹ کرنے والی کمپنی، 10 پرلز کے شریک بانی، ذیشان آفتاب نے کہا، اس وبائی بیماری کے ساتھ رہتے ہوئے، اب ہر ایک کو یہ احساس ہو گیا ہے کہ اس مارکیٹ میں زندہ رہنے کا واحد راستہ ڈیجیٹل ہونا ہے۔

عالمی اور بڑے پیمانے کی تنظیموں نے پچھلے کچھ مہینوں میں آئی ٹی کے اخراجات کے لئے اپنے بجٹ میں اضافہ کیا ہے، جو پاکستان کی آئی ٹی صنعت کے لئے راہ ہموار کررہا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ "چونکہ پاکستان اپنی صلاحیتوں کے لئے جانا جاتا ہے جہاں وبائی مرض کے اثرات کم لیں، اس لئے ہمیں ترجیح دی جارہی ہے۔”

بڑی تنظیموں نے آرٹیفیشل انٹیلیجنس، ٹیلی میڈیسن اور بزنس پراسس آٹومیشن پر خرچ میں اضافہ کیا ہے۔ اس کے علاوہ، بنیادی طور پر چھوٹے سے درمیانے درجے کے کاروباری اداروں (ایس ایم ای) کے ای کامرس سلیوشنز کی طلب میں اضافہ ہوا ہے۔

پاکستان کی برآمدات کی بڑی منڈیوں میں امریکہ، برطانیہ، یورپ اور مشرق وسطی کی حیثیت برقرار ہے۔ یہ سافٹ ویئر کنسلٹنسی، آٹومیشن، ای کامرس، بی پی اوز اور آرٹیفیشل انٹیلیجنس کے شعبوں میں بڑے پیمانے پر کام کر رہا ہے۔

یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ اسٹیٹ بینک کے اعدادوشمار کے مطابق، پاکستان کی آئی ٹی برآمدات کی ترسیلات زر 1.48 بلین ڈالرز تک پہنچ گئیں جو کہ سال 2019۔20 کے موجودہ مالی سال میں 20 فیصد سالانہ اضافے کے ساتھ رہیں۔ صنعت کے ماہرین کا خیال ہے کہ آئی ٹی اور آئی ٹی سے چلنے والی خدمات کی برآمدات عالمی تجارتی تنظیم کے مقرر کردہ بین الاقوامی معیار کے مطابق تجویز کردہ اقدار سے تین گنا زیادہ ہیں۔

پاکستان سافٹ ویئر ہاؤسز ایسوسی ایشن برائے آئی ٹی اینڈ آئی ٹی ای ایس (پی @ ایس ایچ اے) کے چیئرمین برکان سید نے کہا، "پاکستان کی آئی ٹی برآمدات میں پچھلے دو سالوں سے مستقل طور پر اضافہ ہورہا ہے لیکن مئی سے کوویڈ-19 وبائی امراض سے پیدا ہونے والے مواقع اور دنیا بھر میں خاص طور پر برآمدی ممالک میں ملک کی دن بہ دن بہتر ہونے والی شبیہہ کی وجہ سے ان کی رفتار میں تیزی آئی ہے۔”

انہوں نے کہا کہ اسمارٹ لاک ڈاؤن کے ذریعے کوویڈ-19 کو پھیلانے پر قابو پانے کے لئے سرخیاں بننے کی وجہ سے حالیہ مہینوں کے دوران مارکیٹوں میں پاکستان کی مجموعی امیج میں بہتری آئی ہے، انہوں نے مزید کہا کہ آئی ٹی خدمات کو ملک میں ضروری خدمات اور کمپنیوں کی بچاؤ کے اقدام کے تحت گھر سے کام کرنے کی حکمت عملی بڑے شہروں میں انٹرنیٹ کنکٹیویٹی کی دستیابی کی وجہ سے حکمت عملی کامیاب رہی ہے۔

پاشا کے سربراہ نے دعوی کیا کہ پڑوسی ملک میں کورونا وائرس اور انٹرنیٹ کی ناقص خدمات سے نمٹنے میں منفی صورتحال کی وجہ سے ہمارے ملک کو ہندوستان کے بجائے مختلف مارکیٹوں میں آرڈر دینے پر ترجیح دی جارہی ہے۔

برکان نے کہا کہ برآمدات میں اضافے کے بعد پاکستان میں برآمدات میں نمو کا امکان ناگزیر ہے کیونکہ پاکستان میں آئی ٹی کمپنیاں اعلی معیار کے کام کو اپنے گاہکوں میں قائم وقار کے ساتھ تیار کرتی ہیں۔

اسٹیٹ بینک کے ڈیٹا کے مطابق، سافٹ ویئر مشاورت سے 115 ملین ڈالرز کی برآمدات متوجہ ہوئیں۔ اس کے بعد ٹیلی کمیونیکیشن کی خدمات 95 ملین ڈالرز اور سافٹ ویئر کی برآمدات 87 ملین ڈالرز کی ہیں۔

موجودہ حکومت آئی ٹی انڈسٹری کو فروغ دینے اور معیشت کو ڈیجیٹائزیشن دینے پر توجہ دے رہی ہے۔ اسی مقصد کے لئے، حکومت نے آئی ٹی کمپنیوں کو غیر ملکی کرنسی کے کھاتوں میں برآمدی آمدنی کا 35 فیصد اپنے کاروبار میں توسیع کے مقاصد کے لئے برقرار رکھنے کی اجازت دی ہے۔

آئندہ تین سالوں میں آئی ٹی برآمدات کی سالانہ ترسیلات زر کے لئے 5 بلین ڈالرز کا ہدف مقرر کیا گیا ہے۔

تبصرہ کریں

%d bloggers like this: