نوکیا کی رپورٹ میں آئی او ٹی ڈیوائسز پر بڑھتے ہوئے سائبرٹیکس سے متعلق خبردار کیا گیا ہے۔

نوکیا کی تازہ ترین تھریٹ انٹلیجنس رپورٹ میں متنبہ کیا گیا ہے کہ ناقص حفاظتی انتظامات کی وجہ سے انٹرنیٹ سے منسلک آلات پر سائبر اٹیکس خطرناک حد تک بڑھ رہے ہیں۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ آئی او ٹی ڈیوائسز میں اس وقت 33 فیصد متاثرہ ڈیوائسز شامل ہیں، جو 2019 میں 16 فیصد تھے۔

رپورٹ کے مطابق، سب سے زیادہ متاثرہ آئی او ٹی ڈیوائسز وہ ہیں جن کو عام طور پر انٹرنیٹ کا سامنا کرنے والے انٹرنیٹ IP ایڈریس تفویض کیے جاتے ہیں۔ اس پر روشنی ڈالی گئی ہے کہ نیٹ ورکس جو کیریئر گریڈ نیٹ ورک ایڈریس ٹرانسلیشن کا استعمال کرتے ہیں وہ دیکھتے ہیں کہ آئی او ٹی ڈیوائسز کی انفیکشن کی شرح میں کافی حد تک کمی واقع ہوئی ہے کیونکہ کمزور ڈیوائسز نیٹ ورک اسکین پر نظر نہیں آتے ہیں۔

رپورٹ میں پائے جانے والے نتائج پر تبصرہ کرتے ہوئے، نوکیا سافٹ ویئر کے صدر اور چیف ڈیجیٹل آفیسر، بھاسکر گورتی نے کہا:

"تیزی سے ہونے والی تبدیلیاں جو 5 جی ایکو سسٹم میں رونما ہورہی ہیں، 2021 میں منتقل ہوتے ہی پوری دنیا میں مزید 5 جی نیٹ ورک تعینات کردیئے گئے ہیں، آئی او ٹی ڈیوائسز میں نقصاندہ عملوں سے فائدہ اٹھانے کے لئے بدنیتی پر مبنی عناصر کے لئے کافی مواقع کھلے ہیں۔ اس رپورٹ سے نہ صرف صارفین اور کاروباری اداروں کو سائبر سے تحفظ کے اپنے اپنے طریق کار کو تیز کرنے کی اہم ضرورت کو تقویت ملی ہے، بلکہ آئی او ٹی ڈیوائس پروڈیوسروں کو بھی ایسا کرنے کی ضرورت ہے۔”

آئی او ٹی ڈیوائسز سے دور ہوتے ہوئے، رپورٹ میں یہ بھی دیکھا گیا ہے کہ سائبر جرائم پیشہ افراد نے سائبر اٹیکس لانچ کرنے کے لئے کس طرح کووڈ-19 وبائی بیماری کا استعمال کیا ہے۔ اس میں کہا گیا ہے کہ جرائم پیشہ افراد مالویئر پھیلانے کے لئے لوگوں کے خوف کا استعمال کر رہے ہیں، مثال کے طور پر، انھوں نے کہا ہے کہ ایک کورونا وائرس کے نقشے کی ایپ نے جان ہاپکنز یونیورسٹی ایپ کی نقل کی ہے اور اس پر نصب کردہ ڈیوائسز پر مالویئر تعینات کیا ہے۔ اس قسم کے حملوں سے محفوظ رکھنے کے لئے، نوکیا کی رپورٹ سے پتہ چلتا ہے کہ لوگوں کو صرف قابل اعتماد ذرائع جیسے گوگل اور ایپل سے ایپس انسٹال کرنی چاہیئیں۔

تبصرہ کریں

%d bloggers like this: