جعلی ٹِک ٹاک پروفائلز نے کم عمر بچوں کو دھوکہ دے کر 5 لاکھ ڈالز لوٹ لئے۔

ٹک ٹاک پر جعلی پروفائلز نے پلیٹ فارم پر کم عمر بچوں کو جعلی ایپس کی لالچ دے کر مجموعی طور پر 5 لاکھ ڈالرز لوٹے ہیں۔ ان میں سے کچھ ایپس کے اکاؤنٹس پر ساڑھے تین لاکھ سے زیادہ فالوورز تھے اور اس دھوکہ دہی میں گوگل پلے اسٹور اور ایپل کے ایپ اسٹور پر 7 سے زیادہ بدنیتی پر مبنی ایپس ملوث ہیں۔

ان ایپس کو مجموعی طور پر 2.4 ملین بار سے زیادہ ڈاؤن لوڈ کیا گیا جنھوں نے اسکیمرز کے لئے 5 لاکھ ڈالرز سے زیادہ اکٹھے کئے۔

اس کو سب سے پہلے جمہوریہ چیک کی ایک 12 سالہ بچی نے دیکھا تھا جس نے ٹِک ٹاک پر ٹرینڈنگ ہونے والی ایک مشہور ایپ پر مشتبہ سرگرمی دیکھی اور اس کی اطلاع ایواسٹ (Avast) کو دی۔ وہ ایواسٹ کے "بی سیف آن لائن” سائبرسیکیوریٹی انیشیئیٹو کا ایک حصہ تھیں جو نوجوان سامعین کو یہ سکھاتی ہیں کہ آن لائن مشکوک سرگرمیوں کو کس طرح پہچاننا ہے۔

ایواسٹ کے محققین نے مشکوک سرگرمی کی تحقیقات کیں اور تفصیلی گھوٹالہ دریافت کیا۔ ان ایپس کو کارآمد سافٹ ویئر کے بھیس میں تبدیل کیا گیا تھا لیکن دراصل وہ مداخلت کرنے والے اشتہاروں کے بھیس میں ٹروجن وائرسز کی خدمت کرتی تھیں۔ وہ اپنے آپ کو ہٹانے سے بچانے کے لئے اپنے ایپس کے آئیکونز بھی چھپا لیتے تھے۔ ان میں سے زیادہ تر ایپس ڈویلپرز کے اسی گروپ نے بنائی ہیں۔

دریافت کے بعد، بدنیتی پر مبنی ایپس کی اطلاع فوری طور پر گوگل، انسٹاگرام، ٹک ٹاک اور ایپل کو دی گئی۔

بین وائس جو این ویزیئم کے ایک سینئر ایپلیکیشن سیکیورٹی کنسلٹنٹ ہیں، نے کہا:

اسکیم ایپس کو فروغ دینے کے لئے ٹِک ٹاک پروفائلز کا استعمال غیر مشکوک سپورٹرز سے منافع حاصل کرنے کے لئے مقبول چینلز کو ناجائز استعمال کرنے کا صرف تازہ ترین طریقہ ہے۔ مشکوک نہ ہونے کا بہترین طریقہ یہ ہے کہ ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ ہونے کی تصدیق کریں اور کسی صارف کے پروفائل سے براہ راست کسی لنک پر کلک نہ کریں۔

تبصرہ کریں

%d bloggers like this: